Saturday, October 15, 2011

Ik bachay kay khawab jaisa thaa!


اک بچے کے خواب جیسا تھا
کچھ سمجھ میں نہ آسکا ھم کو
زندگی کا نصاب ایسا تھا ____ !!

تم ایک نازک سے دل کی دھڑکن، ہو ایک شاعر کا خواب جاناں

یہ چاند تارے فدا ہوں تجھ پر، الٹ دے تُو جو نقاب جاناں بہار ساری نثار تجھ پر، ہے چیز کیا یہ گلاب جاناں شمار کرتا ہوں خود کو تجھ پر، تُو زندگی...